پہلوان جنید بغدادی کی کہانی

پہلوان جنید بغدادی کی کہانی

Wrestler Junaid Baghdadi Story

 بغداد کے رہبر نے اعلان کیا کہ آج جنید بغدادی ایک

پہلوان کی حیثیت سے اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کرے گا

ہے کوئی اسے چیلنج کرنے والاایک بزرگ لرزتے ہوئے کھڑے ہوئے

اور بولے میں اس کے ساتھ مقابلے میں شامل ہوں گا۔

جو بھی اس منظر کو دیکھ رہا تھا وہ قہقہے لگا کر تالیاں بجانے لگے۔

بزرگ کو انگوٹھی میں داخل ہونے کی اجازت دے دی گئی۔

بوڑھے نے جنید کو مخاطب کیا میں جانتا ہوں کہ

میرے لیے تمھارے خلاف یہ مقابلہ جیتنا ممکن نہیں

لیکن میں سید ہوں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اولاد میں سے ہوں۔

میرے بچے گھر میں بھوکے مر رہے ہیں۔

کیا تم اللہ کے رسول کی محبت کے لیے اپنا نام اپنی عزت

اور مقام قربان کرنے کے لیے تیار ہو اور یہ مقابلہ مجھ سے کھو دیں؟

اگر آپ ایسا کرتے ہیں تو میں

انعام کی رقم جمع کرنے کے قابل ہو جاؤں گا

اور اس طرح اپنے اور اپنے بچوں کو

سال بھر کا پیٹ پالنے کا ذریعہ بنوں گا۔

میں اپنے تمام قرضے ادا کر سکوں گا اور سب سے بڑھ کر

دونوں جہانوں کا مالک تجھ سے راضی ہو جائے گا۔

جنید بغدادی نے سوچا “آج میرے پاس ایک بہترین موقع ہے۔

جنید نے اپنی طاقت کا استعمال نہیں کیا

اور خود کو گرانے کی اجازت دی۔

اس بزرگ نے اپنے سینے پر چڑھا دیا اس طرح وہ انعام کا حقدار ٹھہرا۔

اس رات جنید بغدادی کو خواب میں

آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

 

You May Also Like:A One Thousand Camels

کہ اے جنید تم نے اپنی عزت

اپنی قومی شہرت، اپنا نام اور مقام قربان کر دیا ہے

جو آپ کی محبت کے اظہار میں پورے بغداد میں گونج رہا تھا۔

آج تک آپ کا نام اولیاء (اللہ کے دوستوں) کے رجسٹر میں درج ہے۔

اس کے بعد اس عظیم پہلوان نے

اپنے نفس (خواہشات) کو شکست دینا سیکھا

اور اپنے دور کے نامور اولیا میں سے ایک بن گیا۔

 

You May Also Like:The Maqam of Prophet Ishaq (A.S)

You May Also Like:The Minaret of Prophet Isa (A.S)

Leave a Reply

Your email address will not be published.