بھوک کی لہر کی طاقت یمنیوں کو زندہ رہنے کے لیے درختوںکے پتے کھانے کے لیے بھوکا مار رہی ہے

بھوک کی لہر کی طاقت یمنیوں کو زندہ رہنے کے لیے درختوں

کے پتے کھانے کے لیے بھوکا مار رہی ہے

The Power Of  The Hunger Wave Is Starving Yemenis To Eat Tree Leaves To Survive

 

The-Power-Of-The-Hunger-Wave-Is-Starving-Yemenis-To-Eat-Tree-Leaves-To-Survive
 

 

اقوام متحدہ کے ورلڈ فوڈ پروگرام

کی جانب سےیمن میں بہت سے ایسے

خاندان ہیں جو غذائی قلت کا شکار ہیں۔

 سعودی قیادت میں جاری جنگ یمن میں

شہریوں کی زندگیوں کو متاثر کر رہی ہے۔ 

ڈبلیو ایف پی   کا کہنا ہے کہ عرب ملک کے تنازعات

اور معاشی زوال کے درمیان یمن

میں بھوک کی لہر بڑھ رہی ہے۔

یمن کے کچھ سب سے زیادہ متاثرہ

علاقوں جیسے شمال مغربی یمن میں

حجہ میں خاندان زندہ رہنے کے لیے درخت کے پتے

ابلنے جیسے مایوس کن اقدامات کا سہارا لینے پر مجبور ہیں۔

یمن کی وزارت صحت نے کہا کہ 2018 کے پہلے چھ مہینوں میں

صوبہ حجہ میں  غذائی قلت کے 17,000 کیسز ریکارڈ کیے گئے۔

 غذائی قلت جو اس علاقے کو متاثر کرتی ہے

 

گزشتہ ماہ اقوام متحدہ کی انسانی ہمدردی کی تنظیم نے کہا تھا

کہ فنڈز کی کمی نے جنوری سے شروع ہونے والے جنگ

زدہ یمن کے لیے خوراک کی امداد کو کم کرنے پر اکسایا ہے۔

ڈبلیو ایف پی کے مطابق 16 ملین سے زیادہ یمنی

یعنی ملک کی نصف آبادی شدید بھوک کا شکار ہے

جب کہ 2.3 ملین یمنی بچے غذائی قلت کے خطرے سے دوچار ہیں۔

یمن 2014 سے تشدد اور عدم استحکام کا شکار ہے۔

جب ایران سے منسلک حوثی باغیوں نے

دارالحکومت صنعا سمیت ملک کے

بڑے حصوں پر قبضہ کر لیا تھا۔

یمن کی حکومت کو بحال کرنے

کے لیے سعودی زیرقیادت اتحاد نے

صورتحال کو مزید خراب کیا ہے جس کی وجہ سے

دنیا کے بدترین انسانی بحران میں سے ایک ہے۔

جس کے بارے میں اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق

تقریباً 80 فیصد یا تقریباً 30 ملین افراد کو انسانی امداد

اور تحفظ کی ضرورت ہے جب کہ 13 ملین سے زیادہ

 خطرے میں لوگ  ہیں۔

 

You May Also Like: A One Thousand Camels

Leave a Reply

Your email address will not be published.