جبریل کا دروازہ (باب جبرائیل)

جبریل کا دروازہ (باب جبرائیل)

The Door of the Jibraeel (Bab-e-Jibraeel)

 

مسجد نبوی کے مشرقی جانب اس دروازے کو باب جبرائیل اس لیے کہا جاتا ہے

کہ جبرائیل علیہ السلام اس طرف سے وحی لے کر اترتے تھے۔

جنگ احزاب کے بعد جبرائیل علیہ السلام نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے

پاس آئے اور اسے جنگِ خندق بھی کہا جاتا ہے اور باب جبرائیل

کے دروازے پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے گفتگو کی۔

بخاری میں اس کا ذکر ہے جیسا کہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے

کہ جنگ احزاب کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے

آپ کو غیر مسلح کیا اور غسل کیا اتنے میں جبرائیل علیہ السلام

ٹٹو پر سوار ہوئے اور باب جبرائیل کے دروازے کے

پاس نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے گفتگو کی۔

جبرائیل علیہ السلام نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کہا کہ

آپ نے اپنے ہتھیار پھینک دیئے ہیں

لیکن ہم (فرشتے) ابھی تک جنگی وردی میں ہیں۔

لہٰذا آپ ہمارے ساتھ قبیلہ بنو قریظہ پر حملہ کرنے کے لیے چلیں۔

عائشہ رضی اللہ عنہا نے مزید کہا کہ میں اپنی جھونپڑی کے دروازے

کی دراڑ سے جبریل علیہ السلام کو دیکھ رہی تھی۔

جبرائیل علیہ السلام پر خاک چھائی ہوئی تھی۔

اس دروازے کو باب عثمان (عثمان کا دروازہ) کے نام سے بھی جانا جاتا ہے

کیونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس سے گزر کر عثمان رضی اللہ عنہ

کی زیارت کے لیے جاتے تھے جن کا گھر بالکل سامنے تھا۔

You Might Also Like:The Mehrab-e-Tahajjud

You Might Also Like:The Masjid-e-Nabwi

Leave a Reply

Your email address will not be published.