کوڑھی نابینا آدمی کی کہانی

کوڑھی نابینا آدمی کی کہانی

The Story Of  leper Blind Man

 

صحیح حدیث کی یہ کہانی ہم سب کے شکر گزار ہونے کی ایک مضبوط یاد دہانی ہے

اور ہمیں اللہ کی عطا کردہ نعمتوں پر غور کرنے کی ترغیب دیتی ہے ہمیں اپنے برے دنوں کو

کبھی نہیں بھولنا چاہیے ہمیں ان دنوں کو کبھی نہیں بھولنا چاہیے جن میں ہم محتاج تھے

ورنہ ہم اس کا نتیجہ چھلانگ لگانے والے اور گنجے آدمی کو بھگتنا پڑ سکتا ہے۔

یہ قصہ جو صحیح بخاری جلد 4 کتاب 56 نمبر 670 میں مذکور صحیح حدیث ہے۔

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم

کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ اللہ تعالیٰ نے تین اسرائیلیوں کو آزمانا چاہا جو ایک کوڑھی، ایک اندھا

اور ایک گنجے تھے۔ چنانچہ اس نے ان کے لیے ایک فرشتہ بھیجا۔

فرشتہ کوڑھی کے پاس آیا اور کہنے لگا کہ تمہیں کون سی چیز زیادہ پسند ہے؟

اس نے جواب دیا اچھا رنگ اور اچھی جلد، کیونکہ لوگ مجھ سے سخت نفرت کرتے ہیں۔

فرشتے نے اسے چھوا اور اس کی بیماری ٹھیک ہوگئی، اور اسے ایک اچھا رنگ اور خوبصورت جلد عطا کی گئی۔

فرشتے نے اس سے پوچھا کہ تمہیں کون سا مال سب سے زیادہ پسند ہے، اس نے جواب دیا

اونٹ (یا گائے)۔ تو اسے (یعنی کوڑھی) کو حاملہ عورت دی گئی، اور فرشتے نے (اس سے) کہا

اللہ اس میں تمہیں برکت دے۔

 

گنجے سر والے آدمی

 

فرشتہ پھر گنجے سر والے آدمی کے پاس گیا اور کہا کہ تمہیں کون سی چیز سب سے زیادہ پسند ہے؟

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مجھے اچھے بال پسند ہیں اور میں اس بیماری سے شفا چاہتا ہوں

کیونکہ لوگ مجھ سے نفرت محسوس کرتے ہیں، فرشتے نے اسے چھوا تو اس کی بیماری ٹھیک ہو گئی

 اور اسے اچھے بال عطا کیے گئے۔ فرشتے نے (اس سے) پوچھا، ‘تمہیں کون سی جائیداد زیادہ پسند ہے

 اس نے جواب دیا، ‘گائیں،’ فرشتے نے اسے حاملہ گائے دی اور کہا،اللہ اس میں تمہیں برکت دے۔

فرشتہ نابینا کے پاس گیا اور پوچھا کہ تمہیں کون سی چیز زیادہ پسند ہے؟

اس نے کہا (میں پسند کرتا ہوں) کہ اللہ تعالیٰ میری بینائی مجھے لوٹائے تاکہ میں لوگوں کو دیکھ سکوں

 فرشتے نے اس کی آنکھوں کو چھوا تو اللہ تعالیٰ نے اس کی بینائی واپس کر دی۔ فرشتے نے اس سے پوچھا

تمہیں کون سی جائیداد سب سے زیادہ پسند ہے؟‘‘ اس نے جواب دیا بھیڑ۔ فرشتے نے اسے حاملہ

بھیڑ دی۔ اس کے بعد تینوں حاملہ جانوروں نے بچے پیدا کیے، اور بڑھتے بڑھے اور اتنے بڑھے

کہ (تین) آدمیوں میں سے ایک کے پاس اونٹوں کا ایک ریوڑ ایک وادی میں بھر رہا تھا

اور ایک کے پاس گایوں کا ایک غول وادی میں بھر رہا تھا، اور ایک بھیڑوں کا ایک ریوڑ ایک وادی کو بھر رہا تھا۔

پھر فرشتہ جس کی شکل و صورت ایک کوڑھی کے بھیس میں تھی، کوڑھی کے پاس گیا اور کہا

 

سفر کے دوران

 

میں ایک غریب آدمی ہوں، جس نے سفر کے دوران معاش کے تمام ذرائع کھو دیے ہیں۔

تو اللہ اور پھر آپ کے سوا کوئی میری ضرورت پوری نہیں کرے گا۔

اس کے نام کے ساتھ جس نے آپ کو اتنا اچھا رنگ اور خوبصورت جلد اور اتنا مال دیا ہے

میں آپ سے سوال کرتا ہوں کہ مجھے ایک اونٹ عطا فرما تاکہ میں اپنی منزل تک پہنچ سکوں۔

اس آدمی نے جواب دیا، ‘مجھ پر بہت ذمہ داریاں ہیں (اس لیے میں آپ کو نہیں دے سکتا)’ فرشتے نے کہا

میرا خیال ہے کہ میں آپ کو جانتا ہوں۔ کیا آپ کوڑھی نہیں تھے جس سے لوگ سخت نفرت کرتے تھے؟

کیا تم غریب آدمی نہیں تھے پھر اللہ نے تمہیں (یہ سب مال) دے دیا، اس نے جواب دیا، (یہ سب غلط ہے)

 مجھے یہ جائیداد اپنے باپ دادا سے وراثت میں ملی ہے، فرشتے نے کہا

اگر تم جھوٹ بول رہے ہیں تو اللہ تمہیں ویسا ہی بنائے جیسا تم پہلے تھے۔ 

پھر وہ فرشتہ جو گنجے کی شکل و صورت میں بھیس بدل کر گنجے آدمی کے پاس گیا

اور اس سے ویسا ہی کہا جیسا اس نے پہلے والے کو کہا تھا

اور اس نے بھی وہی جواب دیا جیسا کہ پہلے نے دیا تھا۔

فرشتے نے کہا اگر تم جھوٹ بول رہے ہو تو اللہ تمہیں ویسا ہی کر دے جیسا تم پہلے تھے۔

فرشتہ، ایک اندھے کی شکل میں، اندھے آدمی کے پاس گیا اور کہا

میں ایک غریب آدمی اور مسافر ہوں، جس کی روزی کے ذرائع سفر میں ختم ہو گئے ہیں۔

 

آنکھ کی بینائی

 

میرا کوئی مددگار نہیں سوائے اللہ کے اور اس کے بعد تم خود۔ میں تجھ سے اس کے نام سے سوال کرتا ہوں

جس نے تجھے تیری بینائی واپس کر دی ہے کہ مجھے ایک بھیڑ عطا فرما تاکہ میں اس کی مدد سے اپنا سفر مکمل کر سکوں

 اس شخص نے کہا، بلاشبہ میں اندھا تھا اور اللہ نے مجھے عطا کیا۔ میری آنکھ کی بینائی واپس; میں غریب تھا

اور اللہ نے مجھے امیر بنایا۔ تو میری جائیداد سے جو چاہو لے لو۔ اللہ کی قسم میں تمہیں اپنے مال میں

سے کچھ لینے سے نہیں روکوں گا جسے تم اللہ کی رضا کے لیے لے سکتے ہو۔

فرشتے نے جواب دیا کہ اپنا مال اپنے پاس رکھو۔

تم (یعنی 3 آدمیوں) کو آزمایا گیا ہے اور اللہ تم سے راضی ہے اور تمہارے دو ساتھیوں سے ناراض ہے۔

 

You May Also Like:Story Of Umar ibn Al-Khattab

You May Also Like:Story of the Jewish Woman And Prophet Muhammad

Leave a Reply

Your email address will not be published.