حضرت صالح علیہ السلام کی کہانی

حضرت صالح علیہ السلام کی کہانی

Prophet Salih Story

 

حضرت صالح  جسے کبھی کبھی صالح بھی لکھا جاتا ہے عظیم نبی نوح علیہ السلام کی اولاد میں سے تھے۔

آپ کو اللہ کی طرف سے قوم ثمود کی طرف بھیجا گیا جو عرب میں واقع الحجر میں رہتی تھی۔

قوم چند نسلوں میں پختہ ہو چکی تھی اور بہت طاقتور، دولت مند اور بااثر بن گئی تھی۔

قرآن نے ذکر کیا ہے کہ کس طرح معاشرے کو ان کے کارناموں پر بہت فخر ہوا اور انہوں نے

اپنی طاقت کی علامت کے طور پر بڑے بڑے قلعے محلات اور دیگر ڈھانچے بنانا شروع کر دیے۔

اس کا ذکر سورہ شوریٰ آیت 128-129 میں ہے

کیا آپ ہر بلندی پر اپنے آپ کو تفریحی نشان بناتے ہیں؟ اور اپنے لیے محلات اور قلعے بنا لو تاکہ تم ہمیشہ رہو؟

انہیں اللہ کی طرف سے ایک موقع دیا گیا کہ وہ اپنی طرف پلٹ جائیں قرآن میں حضرت ہود کی اس تنبیہ کا ذکر ہے

جس نے کہا تھا کہ کیا تم اللہ سے نہیں ڈرو گے؟ (26:124)۔ انہوں نے ان انتباہات کی تردید کی کیونکہ مادیت

کے جنون نے اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ وہ حق کی راہ سے ہٹ گئے غریب اپنے آپ کو خدا کہنے والےامیروں

 کی پوجا کرنے لگے۔حضرت صالح علیہ السلام نے اپنی قوم کو نصیحت کی کہ اے میری قوم اللہ کی عبادت کرو۔

اس کے سوا تمہارا کوئی معبود نہیں۔ اسی نے تمہیں زمین سے پیدا کیا اور اس میں تمہیں بسایا۔ پس اس سے

معافی مانگو اور پھر اس سے توبہ کرو۔ بے شک میرا رب قریب اور قبول کرنے والا ہے(11:61

صالح لوگوں کو اپنی اطاعت اور اللہ سے ڈرنے اور عبادت کرنے کی تلقین کرتا رہا۔

لیکن انہوں نے جواب دیا کہ اے صالح تم اس سے پہلے ہم میں سے ایک وعدہ بند آدمی تھے۔

 

 عبادت کرنے سے منع 

 

کیا آپ ہمیں ان کی عبادت کرنے سے منع کرتے ہیں جن کی عبادت ہمارے باپ دادا کرتے تھے؟

اور جس چیز کی طرف تم ہمیں بلاتے ہو ہم اس کے بارے میں شکوک و شبہات میں مبتلا ہیں۔ (11:62)

تاہم، غریبوں میں سے چند لوگوں نے پیروی کی اور اسلام میں داخل ہوئے جبکہ اکثریت نے صالح کو ملامت کی۔

کچھ نے اسے پاگل قرار دیا جب کہ دوسروں نے کہا کہ اس کے پاس ہونا ضروری ہے۔جیسے جیسے دن گزرتے گئے

ثمود کو خدشہ تھا کہ حضرت صالح کے پیروکاروں کی تعداد بڑھ جائے گی۔ اسے روکنے کی کوشش میں

انہوں نے صالح سے ایک معجزہ طلب کرنے کا ارادہ کیا جس سے ثابت ہو کہ وہ واقعی اللہ کے رسول ہیں۔

انہوں نے اس معجزے کی پرورش کو ناممکن بنانے کا ارادہ کیا۔ چنانچہ ثمود کے اہم رہنما ایک ساتھ بیٹھ گئے

اور صالح کا مقابلہ کیا۔ انہوں نے خاص طور پر ایک بہت بڑی چٹان کی طرف اشارہ کیا اور صالح سے مطالبہ کیا

کہ وہ اس سے ایک اونٹنی نکالے جو بہت لمبی بہت اون، پرکشش اور دس ماہ کی حاملہ ہو انہوں نے مزید کہا

کہ اسے پورے شہر کے لیے دودھ پیدا کرنے کے قابل ہونا چاہیے۔صالح اپنی قوم کو اللہ کے راستے پر لانے

کے لیے بے چین تھا۔ چنانچہ اس نے اللہ سے التجا کی کہ وہ اسے عطا فرمائے جو لوگوں نے مانگا تھا۔

اور وہ دن آیا جب صالح نے اپنے لوگوں کو معجزے کے آنے کا مشاہدہ کرنے کے لیے جمع کیا۔

 

  اللہ تعالیٰ کا حکم 

 

اللہ تعالیٰ نے اسی چٹان کو پھٹنے کا حکم دیا اور اس میں سے ایک سرخ، بہت بڑی دس ماہ کی حاملہ اونٹنی نکلی

 جس سے لوگوں کو حیرت اور تعجب ہوا۔ ان کے درمیان یہ واضح ثبوت تھا کہ بہت سے لوگوں نے اپنے

ایمان کا اعلان کیا۔ تاہم اکثریت اچھوت رہی اور اپنے کفر کی پیروی کرتے ہوئے کہا کہ یہ خالص جادو کے

سوا کچھ نہیں۔ بعض روایات کا خیال ہے کہ اونٹنی کی پیدائش معجزانہ طور پر نہیں ہوئی تھی اور نہ ہی یہ تنازعہ تھا

کہ یہ پتھر سے آئی ہے، قرآن صرف یہ کہتا ہے اے میری قوم یہ اللہ کی اونٹنی ہے 

  تم ایک نشانی ہو تو اسے اللہ کی زمین پر پلنے دو اور اسے کوئی تکلیف نہ پہنچاؤ ورنہ تم پر آنے والا عذاب ہو گا۔

اونٹنی واقعی ایک زندہ معجزہ تھی کہ ہر گزرتے دن لوگ اسلام قبول کرتے تھے۔ کفار یہ برداشت نہ کر سکے۔

آخرکار صالح کے لیے ان کی نفرت کا رخ اونٹنی کی طرف ہو گیا۔ صالح کو خدشہ تھا کہ کفار اونٹنی کے

خلاف سازش کریں گے اور انہیں تنبیہ کرتے ہوئے کہا اے میری قوم یہ اللہ کی اونٹنی تمہارے لیے

ایک نشانی ہے اسے اللہ کی زمین پر چرانے کے لیے چھوڑ دو، اور اسے برائی سے ہاتھ نہ لگاؤ ​​ورنہ تمہیں

قریب کا عذاب آ پکڑے گا۔ ثمود نے ابتدا میں اونٹنی کو اپنی زمین پر چرنے اور عام کنویں سے پینے کی اجازت دی

لیکن یہ مختصر مدت کے لیے تھا۔ثمود کے ناراض ہونے میں زیادہ عرصہ نہیں گزرا تھا کہ مومنین نے اپنے ایمان

میں اضافہ دیکھا جبکہ کافروں کی نفرت اس حد تک بڑھ گئی کہ انہوں نے اونٹنی کو مارنے کی سازش شروع کر دی۔

 

 اونٹنی کو مارنے کی سازش 

 

شہر کے تمام کافروں کی حمایت سے نو آدمی اونٹنی کو مارنے کے لیے نکلے۔ وہ اسے قریب سے دیکھ رہے تھے۔

جیسے ہی وہ کنویں سے پینے کے قریب پہنچی تو ایک آدمی نے اسے ٹانگ میں گولی مار دی جس سے وہ فرار ہونے

میں رکاوٹ بن گئی۔ دوسرے فوراً آگے بڑھے اور اس کے جسم میں تلوار مار کر اسے مار ڈالا۔

شہر کے لوگوں نے اسے ایک واضح فتح کے طور پر دیکھا اور مردوں کے لیے زور سے خوشی کا اظہار کیا۔

وہ اونٹنی کو ذبح کرنے اور اس کا گوشت کھانے چلے گئے۔ جب صالح کو یہ خبر ملی تو اس نے لوگوں کو خبردار

کرنے کے لیے جلدی کی لیکن بہت دیر ہو چکی تھی۔ لوگوں نے اس کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا کہ اے صالح

اگر تو رسولوں میں سے ہے تو ہمارے پاس وہ وعدہ لے آؤ جس کا تو ہم سے وعدہ کرتا ہے۔ صالح نے جواب دیا

تین دن تک اپنے گھروں میں مزے کرو۔ یہ ایک ایسا وعدہ ہے جس سے انکار نہیں کیا جائے گا۔ (11:65)

کافروں نے صالح کو طعنہ دیا اور کہا کہ سزا میں جلدی کرو۔ حضرت صالح علیہ السلام نے فرمایا اے میری قوم تم

بھلائی کے بجائے برائی کے لیے کیوں بے صبری کرتے ہو تم اللہ سے معافی کیوں نہیں مانگتے تاکہ تم پر رحم کیا جائے؟

عوام نے کوئی دھیان نہیں دیا۔ وہ صرف مشتعل ہوئے اور حضرت صالح کو قتل کرنے کی سازش کرنے لگے۔

 

 اللہ کی قسم 

 

نو آدمی اکٹھے ہوئے اور آپس میں بات چیت کرنے لگے کہ اللہ کی قسم کھا لو کہ ہم اسے اور اس کے گھر والوں

کو راتوں رات قتل کر دیں گے۔ پھر ہم اس کے انجام کار سے کہیں گے ہم نے اس کے خاندان کی تباہی

کا مشاہدہ نہیں کیااور ہم سچے ہیں۔ (27:49)اسی دوران اللہ تعالیٰ نے قوم ثمود کے لیے ایک منصوبہ بنایا

“اور انہوں نے ایک منصوبہ بنایا، اور ہم نے ایک منصوبہ بنایا، جب کہ وہ نہیں سمجھتے تھے” (27:50)

چنانچہ اس نے صالح کو اپنے پیروکاروں کو جمع کرنے اور شہر چھوڑنے کا حکم دیا۔ لوگ اس سے چھٹکارا

پا کر بہت خوش تھے۔ وہ صالح کے انتباہ سے بے چین تھے۔ ثمود کے پاس بہترین کاریگری تھی کہ انہوں

نے اپنے گھر پہاڑوں کی گھنی چٹان سے تراشے تھے۔ اس سے وہ خود کو محفوظ محسوس کرتے تھے۔

انہیں یقین تھا کہ ان کے چٹانی قلعے انہیں تمام آفات سے محفوظ رکھیں گے۔صالح کے انتباہ کے تین دن بعد

کڑک نے ہوا بھر دی، اس کے بعد شدید زلزلہ آیا جس نے پورے قبیلے اور اس کے وطن کو تباہ کر دیا۔

زمین پرتشدد سے ہل گئی، اس میں موجود تمام جانداروں کو تباہ کر دیا۔ ایک زبردست چیخ تھی جو بمشکل ختم ہوئی تھی

جب صالح کی قوم کے کافروں کو ایک ہی وقت میں مارا گیا۔ نہ ان کی مضبوط عمارتیں اور نہ ہی  چٹان تراشے

ہوئے گھر ان کی حفاظت کر سکتے تھے۔اس دن کفار ثمود کا کوئی ساتھی نہ تھا۔

 

 حضرت صالح اور مومنین 

 

ان پر اللہ کا غضب نازل ہوا جس کی وجہ سے وہ تباہ ہو گئے اس سے پہلے کہ وہ سمجھ سکیں کہ کیا ہو رہا ہے۔

اس دوران حضرت صالح اور مومنین اللہ کے فضل سے بچ گئے۔ وہ ایک دن الحجر میں اپنی قوم کی تباہی

کا مشاہدہ کرنے کے لیے واپس آیا اور بھاری دل کے ساتھ کہا کہ اے میری قوم میں نے تمہیں اپنے

رب کا پیغام ضرور پہنچایا تھا اور تمہیں نصیحت کی تھی لیکن تم نصیحت کرنے والوں کو پسند نہیں کرتے۔

اس کے بعد حضرت صالح نے فلسطین کی طرف ہجرت کی جہاں وہ اپنی وفات تک مقیم رہے۔

 

You May Also Like:The Story Of  Badr

You May Also Like:The Story Of Prophet Idris(a.s)

Leave a Reply

Your email address will not be published.