نصرالدین اور گدھا

نصرالدین اور گدھا

Nasruddin And Donkey

 

 

میری بیٹی کو اس کہانی سے کس وجہ سے پیار ہے

لیکن مجھے اس سے جو سبق ملتا ہے اس کے لیے مجھے یہ ضرور پسند ہے۔

یہ ایک باپ اور بیٹے کی کہانی ہے جو گدھے کے ساتھ بازار جاتے ہیں۔

آس پاس کے لوگ ان کے انتخاب پر تنقید کرتے ہیں

یا تو گدھے کو اپنے فائدے کے لیے استعمال نہ کرنا یا اس پر بہت زیادہ وزن لادنا

یا تو بچے کو گدھے پر نہ رکھنا یا باپ کو گدھے پر نہ بٹھانا

. وہ اپنے اعمال کو اس بنیاد پر بدلتے رہتے ہیں

کہ لوگ ان کا مذاق اڑاتے ہیں

اور یہ ایک بہت بڑا سبق ہے

کہ کس طرح ہم سب کو شناخت کے مضبوط احساس

اور صحیح اور غلط کے مضبوط احساس کی ضرورت ہے۔

 کہ ہم جان لیں کہ اللہ ہم سے کیا چاہتا ہے۔

ہمارے دل کیا چاہتے ہیں اور پھر ہم اس پر قائم رہیں

اور اس کے لیے بھی ڈٹے رہیں۔

کیونکہ لوگوں کے پاس ہمیشہ کچھ نہ کچھ کہنا پڑے گا۔

 اگر کوئی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم جیسا پاکیزہ شخص تنقید سے خالی نہ رہا۔

تو ہم پیچھے رہنے والے کون ہیں؟

تو میں نے اپنی بیٹی سے کہا

بہت سی چیزیں ایسی ہوں گی

جو تم لوگوں سے مختلف ہو گی

(خاص طور پر دنیا کے اس حصے میں جہاں وہ مسلسل غیر مسلموں سے گھری ہوئی ہے)

اور بہت سی ایسی چیزیں ہوں گی

جنہیں لوگ منظور نہیں کریں گے یا آپ کے لئے مذاق

. لیکن آپ کو معلوم ہونا چاہیے

کہ اللہ کیا چاہتا ہے اور آپ کیا چاہتے ہیں

 

You May Also Like: The Young Mans And Fear Of Allah

You May Also Like: A One Thousand Camels

Leave a Reply

Your email address will not be published.