مسلمان چیونٹیوں کو نہیں مار سکتے چاہے وہ کاٹ لے

مسلمان چیونٹیوں کو نہیں مار سکتے چاہے وہ کاٹ لے

Muslims Can’t  Kill  Ants Even If  They Bite

 

Muslims-Can't-Kill-Ants-Even-If-They-Bite

 

 

چیونٹیاں کام کرنے میں سب سے زیادہ

مستقل جانوروں میں سے ایک ہیں۔

جس کا ذکر قرآن میں کیا گیا ہے 

اس کے نام پر ایک پوری سورت سورہ ان نمل بھی ہے۔

حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم مسلمانوں کو

چار قسم کے جانوروں کو مارنے سے منع کرتے ہیں

 چیونٹیاں، شہد کی مکھیاں، ہودہود (پرندے) اور

سوردی (ہاک کی طرح چڑیا) ہیں۔

حدیث احمد 3066، ابو داؤد 5267 اور

ان کی توثیق صویوئب الارناط نے کی ہے

 

کیا آپ جانتے ہیں کہ چیونٹیوں کو کاٹنے پر مارنے کی ہماری عادت غلط ہے؟

Do you know that our habit of killing ants when they bite us is wrong?

چیونٹیوں کو مارنا حرام ہے چاہے وہ کتنی ہی چھوٹی کیوں نہ ہو

کیونکہ یہ جاندار ہےچیونٹی کے کاٹنے کے

بہت سے مثبت اثرات ہوتے ہیں۔

ان چیونٹیوں کا شکریہ ادا کرنا چاہیے جو ہمیں چباتی ہیں۔

 

چیونٹی کی چٹکی کے فوائد یہ ہیں

Here are the benefits of ant’s pinch

چیونٹی کی چٹکی خون کی گردش کو تیز کرنے اور

خون کے سرخ خلیات کی تعداد بڑھانے کی صلاحیت رکھتی ہے

چیونٹیوں کی چٹکی دماغ میں موجود نیوران

کو حسی سگنلز کے ذریعے متحرک کر سکتی ہے

جو چیونٹی کے کاٹنے والی جگہ سے دماغ

کے نچلے حصے میں واقع حسی خلیات میں منتقل ہوتے ہیں۔ 

الوبھٹ نے ثابت کیا کہ  کسی انسانی

جسم کو ایک ہی جگہ اور ایک ہی وقت

میں ایک سے زیادہ چٹکی لگائی جائے تو

وہ خاص طور پر جلد کے سیروسس کا شکار ہو جائے گا

 جسم کے کسی بھی حصے پر چٹکی لگانا خون کے جمنے کی

حوصلہ افزائی کر سکتا ہے جو خون کے جمنے کو بنانے میں مدد کرتا ہے۔

 چیونٹیاں (مادہ) بڑی مقدار میں آئنک تھوک خارج کرتی ہیں

جو چٹکی بھرے عضو میں چربی کو جلا سکتی ہے۔

مثال کے طور پر اگر ایک چیونٹی بازو کو کاٹتی ہے تو

یہ تھوک آہستہ آہستہ پورے بازو میں پھیل جائے گا

اور بازو میں موجود 99% چربی کو جلا دے گا۔

 

You May Also Like: Thing As Feminism In Islam There Is No Such

Leave a Reply

Your email address will not be published.