غزوۂ بدر اور احد میں حضرت ابوبکر صادق رضی اللہ عنہ کا کردار

غزوۂ بدر اور احد میں حضرت ابوبکر صادق رضی اللہ عنہ کا کردار

Hazrat Abu Bakar Sadiq(r.a) Role In Battles Of Badr And Uhud

Hazrat Abu Bakar Sadiq(r.a) Role In Battles Of Badr And Uhud

 

بدر مکہ کے مسلمانوں اور کافروں کے درمیان پہلی بڑی مصروفیت تھی

جو 17 رمضان المبارک 2 ہجری (13 مارچ 624 عیسوی) کو مدینہ کے قریب بدر کے دن ہوئی۔

غزوہ بدر میں ابوبکر رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے

خیمہ کے محافظوں میں سے تھے اور ان کی حفاظت ان کے سپرد تھی۔

ابن عساکر کی روایت ہے کہ ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کے بیٹے عبدالرحمٰن بدر کے

دن کافروں کے ساتھ تھے۔ جب وہ مسلمان ہوا تو اس نے اپنے والد سے کہا

بدر کے دن تم مجھ پر ظاہر ہوئے اور میں نے تم سے منہ موڑ لیا، میں نے تمہیں قتل نہیں کیا۔

ابوبکر رضی اللہ عنہ نے کہاجہاں تک میرا تعلق ہےاگر تم مجھ پر ظاہر ہوتے تو میں تم سے منہ نہ موڑتا۔

اس صورت حال میں ابوبکر رضی اللہ عنہ کے ایمان کی عظمت ان کی سچائی

اور اخلاص کی گہرائی سے ظاہر ہوتی ہے کہ وہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم

کی محبت کو ہر چیز پر ترجیح دیتے تھے۔ابوبکر (رضی اللہ عنہ) نے صحیح معنوں میں

قرآن و حدیث میں بیان کردہ ہدایات پر عمل کیا۔اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید میں ارشاد فرمایا

تم ایسے لوگوں کو نہیں پاؤ گے جو اللہ اور یوم آخرت پر ایمان رکھتے ہیں

ان لوگوں سے محبت کرتے ہوئے جو اللہ اور اس کے رسول کی مخالفت کرتے ہیں

خواہ وہ ان کے باپ ہوں یا ان کے بیٹے یا ان کے بھائی یا ان کے رشتہ دار۔(سورۃ المجادلہ: 58:22

 

وفاداری

 

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاتم میں سے کوئی اس وقت تک مومن نہیں ہو سکتا

جب تک کہ میں اس کے نزدیک اس کے بچے، اس کے باپ اور تمام لوگوں

سے زیادہ محبوب نہ ہو جاؤں۔ (ابن ماجہ: 67)ابوبکر رضی اللہ عنہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم

کے ساتھ وفاداری کی وجہ سے اپنے کافر بیٹے سے کبھی محبت نہیں کرتے تھے۔

غزوۂ احد میں جو بدر کے اگلے سال ہوئی تھی، اس جنگ میں کفار فتح یاب ہوئے

کیونکہ تیر اندازوں نے احد پہاڑ کی چوٹی پر اپنی جگہ چھوڑ دی تھی۔

اس موقع پر صرف ایک درجن لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ

رہے جن میں سے ایک کٹر مومن حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.