حضرت سلیمان علیہ السلام کی وفات

حضرت سلیمان علیہ السلام کی وفات

Death Of Prophet Sulaiman

 

حضرت سلیمان علیہ السلام نے شان و شوکت سے زندگی گزاری اور حکومت کی۔

اس کا زیادہ تر عوامی کام جنوں نے لوگوں کو یہ یقین دلانے کے لیے کیا کہ جنات کو

غیب کا علم ہے سلیمان نے اپنی قوم کو سکھایا کہ ایسا علم صرف اللہ کو ہے۔

حضرت سلیمان علیہ السلام کی وفات بھی اس سلسلے میں ایک سبق تھی۔

مستقبل کا علم نہ جنوں سے ہے اور نہ انبیاء، بلکہ اللہ ہی جانتا ہے۔

سلیمان اپنا عصا پکڑے بیٹھا تھا جب وہ ایک کان میں کام کرنے والے

کچھ جنوں کی نگرانی کر رہا تھا جنات، جو سلیمان سے گھبرا گئے تھےاس وقت

عمارت پر بہت زیادہ توجہ مرکوز کیے ہوئے تھے جب اللہ نے سلیمان کی جان لینے کا فیصلہ کیا۔

کسی کو اس کی موت کا علم نہیں تھایہاں تک کہ دنوں بعد، ایک بھوکی چیونٹی

 

حضرت سلیمان کا جسم

 

اس کے لکڑی کے عصا کو چبھنے لگی کھاتے ہی لاٹھی ٹوٹ گئی اور حضرت سلیمان

کا جسم جو اس سے ٹیک لگا رہا تھا فرش پر گر گیالوگ اپنے نبی کے پاس بھاگے

اور جلد ہی جان گئے کہ وہ بہت پہلے فوت ہو چکے ہیںاس طرح سب کو معلوم ہوا

کہ اگر جنات کے پاس غیب کا علم ہوتا تو وہ اپنے آپ کو یہ سوچ کر کہ سلیمان

ان کو دیکھ رہے تھے، سخت محنت کرتے ہوئے عذاب میں مبتلا نہ ہوتے۔

سلیمان کی زندگی اور موت درحقیقت ایسے معجزات سے بھری ہوئی ہے۔

اور جب ہم نے سلیمان کی موت کا فیصلہ کیا تو جنات کو ان کی موت کی

طرف اشارہ نہیں کیا گیا سوائے زمین کے ایک جاندار کے جو اس کا عصا کھا رہی تھی۔

لیکن جب وہ گرا تو جنات پر یہ بات واضح ہوگئی کہ اگر وہ غیب جانتے ہوتے تو

ذلت آمیز عذاب میں مبتلا نہ ہوتے۔ (34:14)

 

You May Also Like:Prophet Sulaman(a.s) Story

You May Also Like:Prophet Salih Story

Leave a Reply

Your email address will not be published.